​​Freedom                             Democracy                        Equality

Nasir Aziz Khan, Central Spokesperson UKPNP issued a statement and said that 5th February solidarity day with Jammu and Kashmir is a clumsy joke with people of Jammu & Kashmir . There is no historical significance of this day in Jammu & Kashmir. It is a conspiracy to communalise our society and divide our motherland Jammu Kashmir on religious basis. Sardar Shaukat Ali Kashmiri Exiled Chairman of United Kashmir People's National Party(UKPNP) in a press statement communicated party workers to celebrate 16th March as national Day of State of Jammu and Kashmir.Because 16th March 1846 is the foundation day of former Princely State of Jammu and Kashmir at this day treaty of Amratser was signed and State of Jammu and Kashmir was formed. لام آبااسلام آباد() متحدہ کشمیر پیپلز نیشنل پارٹی کے مرکزی نو منتخب عہدیداروں کے اعزاز میں پارٹی کے پنجاب زون کی جانب سے استقبالیہ تقریب کا انعقاد کیا گیا۔استقبالیہ کا اہتمام راولاکوٹ ہورنہ میرہ سے تعلق رکھنے والے پی این پی کے سینئر رہنما عاطف خالد نے کیا۔تقریب کی صدارت پی این پی پنجاب زون کے صدر سردار راشد نے کی جبکہ نظامت کے فرائض پنجاب زون کی سیکرٹری کامریڈ سردار تانیہ خان نے سرانجام دیے۔ تقریب راولپنڈی کے مقامی ہوٹل میں ہوئی جس میں متحدہ کشمیر پی این پی کے نو منتخب مرکزی سینئر وائس چیئرمین سردار آفتاب حسین، وائس چیئرمین محمد بشیر راجہ، سیکرٹری امور نسواں کامریڈ نگہت گردیزی، مرکزی رہنماؤں سردار اعجاز کشمیری، شکیل عامر، سردار خضر ایڈووکیٹ، سردار وحید، بابر تاس اور دیگر نے شرکت کی اور خطاب کیا۔ اس موقع پر معروف سیاسی کارکن کامریڈ آمنہ بٹ نے متحدہ کشمیر پیپلز نیشنل پارٹی میں شمولیت کا اعلان کیا۔ استقبالیہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے سینئر وائس چیئرمین سردار آفتاب حسین، میزبان عاطف خالد اور دیگر مقررین نے کہا کہ متحدہ کشمیر پیپلز نیشنل پارٹی ریاست جموں و کشمیر کی قومی آزادی اور غیر طبقاتی سماج کے قیام کے لیے بر سر پیکار ہے اور ہماری جدوجہد مقاصد کے حصول تک جاری و ساری رہے گی۔ مقررین نے آزاد کشمیر اور گلگت بلتستان میں انسانی حقوق کی پامالیوں کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا اور مطالبہ کیا کہ مسئلہ کشمیر کے حتمی حل تک آزاد کشمیر و گلگت بلتستان کو وہ تمام حقوق دیے جائیں جسکا اقوام متحدہ میں وعدہ کیا گیا تھا۔ انھوں نے کہا ہے کہ اکیسویں صدی میں جب جانوروں کے بھی حقوق ہیں ہمارے اوپر 70 برس سے الحاق کی شق مسلط ہے۔ لینٹ افسران آج بھی ریاستی حکمرانوں کے آگے جوابدہ نہیں ہیں۔ ہماری اسمبلی کا ممبر آج بھی کوئی قانون سازی نہیں کر سکتا۔ بلدیاتی ادارے،طلبہ یونین آج بھی نہیں ہیں حالانکہ طلبہ یونین سے ہی لیڈر شپ پیدا ہوتی ہے۔انھوں نے کہا کہ سیاسی پارٹیاں اور جمہوریت کتنی ہی بد تر ہوں بہتری انہی سے آئے گی۔ امریت اور مارشلا سے مراد بغیر کسی آئین قانون و ضابطے کے رہنا ہے۔ مقررین نے کہا کہ ہمارے معاشرے میں سوال کرنے والے آج بھی کافر قرار دیے جاتے ہیں۔ زندہ معاشرے انسان کو سوال کرنے کا حق دیتے ہیں اور مردہ معاشرے میں صرف چپ رہنے کی تلقین کی جاتی ہے۔ اگرچہ ریاست ہمیشہ جبر کے نتیجے میں بنتی ہے لیکن قیام کے بعد ایسے قوانین بنائے جاتے ہیں جو انسانوں کی فلاح کیلئے ہوں۔ رہنماوں نے کہا کہ مہاراجہ کے دور میں73فیصد رقبے پر جنگلات تھے آج صرف 10فیصد رہ گئے۔ محکمے اور ٹمبر مافیا نے ملکر ہمارا قدرتی حسن لوٹ لیا، ٹمبر مافیا حکمران بن گئے لیکن ہم خاموش ہیں اس لئے کہ بنیادی طور پر ہم بہادر لوگ نہیں ہیں۔ ہم اسرائیل،امریکہ اور انڈیا کیخلاف جلوس نکالتے ہیں لیکن جو ہمارے اوپر ظلم کرتے ہیں انکے خلاف نہیں بولتے۔ انھوں نے کہا کہ آزاد کشمیر کی حکومت کا یہ حال ہے کہ آپ اپنے دریاؤں کا پانی نہیں استعمال کر سکتے۔ دو دریاؤں کے رخ موڑ کر مظفرآباد میں ڈیم بنایا گیا۔ مظفر آباد کے 6 لاکھ انسانوں کی زندگیاں تباہی کے دھانے پہنچا دی گئی ہیں۔ انھوں نے کہا کہ ہم پاکستان کی ضرورت کیخلاف نہیں لیکن بتایا جائے کہ ڈیم کس کی ملکیت ہے اور اسکا ہماری ریاست کو کیا فائدہ ہے۔ ہمارا قدرتی ماحول تباہ،گھر بار اجڑ گئے لیکن ملے گا کیا یہ تو بتایا جائے۔ مقررین نے کہا کہ عالمی پابندی کے باوجود ہماری ریاست میں دہشتگرد دندناتے پھر رہے ہیں راولاکوٹ، باغ، مظفرآباد سمیت ریاست میں آپکو جلسہ کرنے کیلئے بھی ریاست سے اجازت کے بجائے ان دہشتگردوں سے لڑنا پڑتا ہے۔ ہم ایک طرف دہشتگردی کیخلاف جنگ لڑ رہے ہیں دوسری طرف انکی سرپرستی کر رہے ہیں۔ یہ دوہرا معیار ہمیں تباہی کے دہانے لے جا رہا ہے۔ تقریب کے اختتام پر پارٹی رہنماوں کی جانب سے فیصلہ کیا گیا کہ ہر سال کی طرح اس بار بھی پی این پی 8 مارچ کو یوم خواتین اور 16 مارچ کو نیشنل ڈے بھرپور انداز سے منائے گی جسکے لئے آج ہی سے تیاریاں شروع کر دی گئی ہیں۔ اس موقع پر پارٹی کے جلا وطن چیئرمین سردار شوکت علی کشمیری کی جہد مسلسل کو سرخ سلام پیش کیاگیا اور پی این پی کی سابق رہنما کامریڈ نائلہ خانین کو انکی لازوال جدوجہد پر سلام عقیدت پیش کیا گیا۔کیا گیا۔

​ United Kashmir People's National Party

Sardar Shaukat Ali Kashmiri 
Exiled Chairman of United Kashmir Peoples National Party (UKPNP)

The great leadership who is struggling for the rights of the People’s of the former princely state of Jammu & Kashmir. He is living in exile in Switzerland since April 25, 1999 after his life was in danger at the hands of ISI of Pakistan Army. Since 2002, he is Secretary General of International Kashmir Alliance (IKA), which is comprised of secular political parties struggling for the independence of Kashmir, Gilgit & Baltistan.
He was born on May 24, 1958 in a village called Papanar near Trarkhal, Sudhnuti, ‘Azad’ Kashmir. After completed early education from Government High School, Trarkhal in 1973, he moved to Karachi where he completed his F.Sc. In 1977 from Government Science College, Nazimabad, Karachi, and then B.Sc. in 1980 and then Bachelor of Laws in 1982 and Master of Islamiat in 1985 from Karachi University, Pakistan.
During student career at Karachi, he struggled for the educational and democratic rights of the students and organised many demonstrations and strikes in order to put administration’s attention on the matters. He was several times in jail in Pakistan and Pakistani occupied Kashmir.
During the period from 1985 to 1997 he practiced as an advocate in different courts of ‘Azad’ Kashmir. He is member of many NGOs and was once elected as general secretary of Bar Association Rawalakot. He was Secretary General of Sudhan Educational Conference, the oldest and biggest welfare organization. During the period from 1980 to 1997 he organised seminars in different cities of ‘Azad’ Kashmir on human rights violations and right of self-determination of the people of Kashmir, Gilgit & Baltistan and demanded the exit of Pakistan Army from POK.
He organised many demonstrations against Theo-fascism and Pakistan’s proxy war with India. In 1993, he represented Kashmiri people in the European Parliament Round Table Conference held in Brussels, in Belgium
Due to his strong and effective campaigns and increasing fame in the public, which was becoming a big threat to the puppet Government officials and other ISI bless parties for the future; He was abducted by ISI in 1994 and 1998. UKPNP and other like-minded parties and nationalist groups demonstrated against his illegal confinement and detention throughout ‘Azad’ Kashmir and Pakistan. In start ISI and Government of POK denied any involvement in his abduction, but because of continue pressure from the public and international community; he was released without charge after 9 months of illegal arrest.In 1994, he became the founding Chairman of United Kashmir People’s National Party.
During the period from 1999 to 2016 he delivered speeches during the sessions of UNHRC and Sub Commission on Human Rights in Geneva, on the subject of human rights violations and the Kashmiri’s right to self-determination for the establishment of United States of Kashmir On represented UKPNP in different international forums. 
Amnesty International declared him a prisoner of conscience when he was abducted by ISI in 1994 and 1998. 
He is living in exile in Switzerland since April 25, 1999 after his life was in danger at the hands of Inter-Services Intelligence (ISI) of Pakistan Army.
He is Secretary General ofJammu & Kashmir International People's Alliance (JKIPA), which is comprised of secular political parties struggling for the independence of Kashmir, Gilgit & Baltistan.
From 2002 to date, he has organised many conferences in different capitals of European countries.
By collecting all political parties of Jammu and Kashmir he has done Lobbying in favour of , Baroness Emma Nicholson's"Report on Kashmir: Present Situation and Future Prospects" which was under debate and discussion in 2007 at European Parliament Belgium ,Brussels . 
The only Kashmiri Nationalist Leader Exiled Chaiman UKPNP ,Sardar Shaukat Ali Kashmiri along with UKPNP delegation was present at the historical moment for the whole Kashmiri Nation where the "Report on Kashmir: Present Situation and Future Prospects" was passed by an overwhelming majority in the European Parliament in Strasbourg on 24 May 2007.
Indeed the European Union Policy on Kashmir and its Resolutions were historic significance for the oppressed Kashmiris which is a milestone for the Unification of Whole Jammu and Kashmir.